طوفانی بارش:لاہور جل تھل،6 افراد ہلاک

0
3

لاہور: شہر میں گزشتہ کئی گھنٹوں تک جاری رہنے والی بارش نے تباہی مچادی ہے جب کہ مختلف حادثات میں 6 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں۔لاہور سمیت پنجاب کے مختلف شہروں میں گرج چمک کے ساتھ موسلادھار بارش کا سلسلہ جاری ہے۔ گزشتہ کئی گھنٹوں سے جاری بارش نے تباہی مچادی ہے، شہر میں جاری شدید بارشوں کے باعث سڑکیں اور انڈر پاس تالاب کا منظر پیش کرنے لگے ہیں۔ دوسری جانب شہر کے مختلف علاقوں میں کرنٹ لگنے اور چھتیں گرنے کے واقعات میں 6 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔بارش کا پانی گھروں میں داخل ہونے سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

ہربنس پورہ، باغبان پورہ، گڑھی شاہو اور مغل پورہ سے ملحقہ علاقے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں جہاں سڑکوں پر کئی کئی فٹ پانی جمع ہوگیا ہے۔ ایم ڈی واسا زاہد عزیز کے مطابق واسا کا عملہ رات سے نکاسی آب میں مصروف ہے، بارش رکنے کے بعد دو سے تین گھنٹے شہر سے پانی نکالنے میں لگ سکتے ہیں۔ادھرلاہور میں جاری شدید بارشوں کی وجہ سے لیسکو کے ساڑھے تین سو فیڈرز ٹرپ کرگئے ہیں جس کے باعث شہر میں بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی ہے، لیسکو حکام کا کہنا ہے کہ بارش رکنے کے بعد ہی بجلی کی فراہمی کا کام شروع ہوسکے گا۔ملک کے مختلف علاقوں حافظ آباد، شیخوپورہ، کلر کہار، پنڈ دادن خان میں بھی گرچ چمک کے ساتھ موسلا دھار بارش ہوئی جس کے باعث موسم خوشگوار ہوگیا، نارنگ منڈی کے نواحی گاوں بورے اوٹھ میں بارش کے باعث کرنٹ لگنے سے 16 سالہ لڑکی جاں بحق ہوگئی جب کہ مسلسل 13 گھنٹوں سے ہونےوالی طوفانی بارش سے ندی نالوں میں طغیانی کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔

محکمہ موسمیات کے مطابق لاہور کے علاقے لکشمی چوک میں 243ملی میٹر، مصری شاہ میں 216، پانی والا تالاب میں 210، نشتر ٹاون میں 187، اپرمال میں 180ملی میٹراورمغلپورہ میں 185ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی، جب کہ میئرلاہور کرنل(ر)مبشر نے دعویٰ کیا ہے کہ لاہور میں اب تک 350 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی جاچکی ہے۔ یاد رہے کہ اس سے قبل 1980 میں لاہور میں 330 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی تھی۔ دوسری جانب ریسکیو 1122 نے شہریوں کو محفوظ مقامات تک پہنچانے کے لیے کشتی سروس کا آغاز کردیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here