اہم خبریںپاکستان

جن کا جینا مرنا او رسب کچھ باہر ہو وہ ملک کا دکھ اور دردنہیں سمجھ سکتے :عمران خان

تاجروں کی مشاورت سے پالیسیاں تشکیل دینگے، ٹیکسز کی شرح کو نیچے لائیں گے جس سے مزید لوگ ٹیکس نیٹ میں آئیں گے ،تحریک انصاف کے چیئرمین کا مقامی ہوٹل میں گرینڈ ٹریڈر ز الائنس کی تقریب سے خطاب

لاہور:پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ نواز شریف اور آصف زرداری کا سب کچھ باہر پڑا ہے اور دونوں مک مکا کر کے کام کر رہے تھے ، تجربہ کاری کی دعویدار (ن) لیگ کی ٹیم نے ملک کی معیشت تباہ کر کے رکھ دی ہے ، تاجروں کی مشاورت سے پالیسیاں تشکیل دیں گے، ٹیکسز کی شرح کو نیچے لائیں گے جس سے مزید لوگ ٹیکس نیٹ میں آئیں گے اور اس سے سرمایہ کاری آنے سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مقامی ہوٹل میں گرینڈ ٹریڈر ز الائنس کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا جنہوںنے پی ٹی آئی میں شمولیت اور عام انتخابات میں بھرپور حمایت کا اعلان کیا ۔ اس موقع پر نعیم الحق، عون چوہدری، جمشید اقبال چیمہ سمیت دیگر بھی موجود تھے ۔

عمران خان نے کہا کہ جنکا جینا مرنا پاکستان میں نہیں ،بینک بیلنس ، محلات باہر ہوں ، علاج معالجہ اور شاپنگ باہر ہو و ہ پاکستان کا دکھ درد نہیں سمجھ سکتے۔ تین مرتبہ وزیراعظم رہنے والے نواز شریف کے بیٹے باہر بیٹھ کر ارب پتی بن گئے، سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے بیٹوں کی دبئی مین اربوں روپے کی پراپرٹی اور بینک بیلنس ہے جب ان سے پوچھا جاتا ہے تو کہتے ہیں ہم پاکستان کے شہری ہی نہیں ۔ اگر قوم کو اٹھانا ہے تو اس کے لئے اپنے سے احتساب شروع کرنا ہوگا ۔ آصف زرداری اور نواز شریف کا سب کچھ باہر ہے اور دونوں مک مکا کر کے کام کر رہے تھے ۔ پاکستان کا قرضہ 27ہزارب ارب روپے تک پہنچ گیا ہے ۔پیپلز پارٹی اور (ن) لیگ کی قیادت کے پیسے باہر پڑے ہوئے ہیں اور ان میں اضافہ ہو رہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ تاجر برادری لوگوں کو روزگار کے مواقع دیتی ہے ہم آپ کی مشاورت سے پالیسی بنائیں گے او ر آپ کو ساتھ لے کر چلیں گے ۔ ہم نے سیلز ٹیکس کے بارے میں سوچ بچار کی ہے اسے نیچے لے کر آئیں گے جس سے ٹیکس نیٹ میں زیادہ لوگ آئیں گے جب پیسہ بچتا ہے تو اس سے سرمایہ کاری ہوتی ہے اور اس سے ملک میں روزگار آتا ہے ۔ (ن) لیگ کے دور میں صرف ڈھائی ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہوئی جبکہ پرویز مشرف کے دور میں 20ارب ڈالر ہوئی تھی ۔ جب آپ موقع ہی نہیں دیں گے آسانیاں پیدا نہیںکریں گے تب تک معیشت ترقی نہیں کر ے گی ۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹیکسز کی شرح میں کمی کی تو وہاں پر سرمایہ کاری آئی ۔انہوںنے شرکاءکو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ پہلے تاجر اس طرف تھے شکر ہے اب ہمارے ساتھ آ رہے ہیں ، ود ہولڈنگ ٹیکس پر بھی غور کیا جائے گا ۔ سابقہ حکومتوں نے مینو فیکچرنگ کابیڑہ غرق کر دیا ہے جس کی وجہ بے پناہ ٹیکسز ہیں ۔

بھارت بنگلہ دیش میں بجلی او ر گیس سستی ہے ،ہمارا کسان بھارت کے کسان کا مقابلہ کرنے سے قاصر ہے کیونکہ وہاں پر کسان کو ٹیوب ویل او رزرعی لوازمات پر سبسڈی ملتی ہے جبکہ ہمار ے کسان کے خرچے پورے نہیں ہو رہے ۔ انہوں نے کہا کہ جب تک تاجر برادری کےلئے آسانیاں پیدا نہیں کریں گے اس وقت تک معیشت ترقی نہیں کرے گی ۔ انہوں نے کہا کہ جن لوگوں کا بینکوں میں پیسہ پڑا ہوا تھا اس کی ویلیو 20فیصد کم ہو گئی ہے جن کے 128روپے تھے وہ آج 100روپے رہ گئے ہیںجبکہ جن کادس سال پہلے بینک میں سوو رپیہ تھا آج وہ 45روپے رہ گیا ہے ،قوم بیٹھے بٹھائے غریب ہو گئی ہے ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close