اہم خبریںپاکستان

ہماری حکومت میں احتساب مجھ سے شروع ہوگا ، عمران خان

کسی کوسیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنائینگے،ساری پالیسیاں کمزور طبقے اور غریب کسانوں کےلئے بنائینگے،ملک کو ایسے چلائینگے کبھی پہلے ویسے نہیں چلا ہوگا، ، ثابت کرکے دکھاﺅں گا ہم گورننس بہتر کرسکتے ہیں،وزیراعظم ہاﺅس بہت بڑا محل ،وہاں رہنا شرم کی بات ہوگی،انتخابات میں برتری کے بعد چیئرمین پی ٹی آئی کا پہلا خطاب

اسلام آباد:چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کہا ہے کہ 22 سال کی جدوجہد کے بعد اللہ نے مجھے اپنے خواب پورے کرنے کا موقع دیا ہے، ہماری حکومت میں احتساب مجھ سے شروع ہوگا اس کے بعد میرے وزرا کا احتساب ہوگا، قانون کی بالادستی قائم کرینگے، کسی کوسیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنائیں گے،ساری پالیسیاں کمزور طبقے اور غریب کسانوں کےلئے بنائینگے،ملک کو ایسے چلائینگے کبھی پہلے ویسے نہیں چلا ہوگا، ، ثابت کرکے دکھاﺅں گا ہم گورننس بہتر کرسکتے ہیں،سادگی قائم ، خرچہ کم کرینگے اور پیسہ انسانوں کی فلاح پر خرچ کرینگے، ٹیکس کلچر ٹھیک ،اینٹی کرپشن، ایف بی آر اور نیب کو مضبوط کرینگے۔

پیداوار بڑھانے کیلئے کسانوں کی مدد کرینگے،سارا پیسہ انسانی ترقی پر خرچ کرینگے،عوام سے وعدہ کرتا ہوں ان کے ٹیکس کے پیسے کی حفاظت کرونگا،وزیراعظم ہاﺅس ایک بہت بڑا محل ہے اس میں جا کر رہنا میرے لئے شرم کی بات ہوگی ،حالیہ الیکشن تاریخی تھا، لوگوں نے قربانیاں دیں، سیکیورٹی اہلکاروں نے بھی جانیں دیں انہیں خراج تحسین پیش کرتا ہوں،عوام کے ٹیکس کے پیسوں پر عیاشیاں کرنے کی روایت تبدیل کرونگا، ہمیں خود ان مسائل سے نکلنا ہوگا کوئی باہر سے آ کر ہمیں نہیں نکالے گا،خارجہ پالیسی پر توجہ دینگے،پڑوسی ممالک کےساتھ بہتر تعلقات چاہتے ہیں، چین اور ایران سے تعلقات مزید بہتر کرینگے، افغانستان سے ایسے تعلقات چاہتا ہوں کہ سرحدیں کھلی ہوں ۔

پاک امریکہ تعلقات سے دونوں ممالک کو فائدہ ہو ، مشرق وسطیٰ میں لڑائیاں ختم کرنے میں ثالث کا کردار ادا کرنے کی کوشش کرینگے، بھارت اور پاکستان کے تعلقات بہتر ہونے چاہئیں، دونوں ممالک میں تجارت بڑھنی چاہئے اس سے دونوں ممالک کو فائدہ ہوگا، کشمیر کے لوگوں نے اپنی آزادی کیلئے بہت جانیں قربان کی ہیں، کوشش ہونی چاہیے کہ ہم کشمیر کا مسئلہ میز پر بیٹھ کر حل کریں ۔ انہوں نے کہا کہ اگر الزامات لگتے رہے تو مسئلہ حل نہیں ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ اگر بھارت کی لیڈر شپ تیار ہے تو ہم بھی بات چیت کےلئے تیار ہیں، بھارت ایک قدم آگے بڑھائے گا ہم دو قدم آگے بڑھیں گے، یہ پاکستان کا سب سے شفاف الیکشن ہوا ہے، اپوزیشن کے خدشات کو ان کے ساتھ مل کر دور کرنے کو تیار ہیں۔عام انتخابات میں اپنی جماعت کی واضح برتری کے بعد جمعرات کو بنی گالہ سے پہلا خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ 22 سال کی جدوجہد کے بعد اللہ نے مجھے اپنے خواب کو پورا کرنے کا موقع دیا ہے۔میں نے 1996 میں جدوجہد شروع کی تھی ،اللہ کا شکر اداکرتاہوں جس نے مجھے اس مقام پر پہنچایا۔

انہوں نے کہا کہ چاہتا تو آرام سے زندگی گزار سکتا تھا لیکن سیاست میں اس لئے آیا کہ میں نے پاکستان کو اوپر جاتے اور نیچے آتے ہوئے دیکھا،یہاں کرپشن اور گورننس کا نظام بہتر نہیں تھا، پاکستان کو قائد اعظمؒ کا پاکستان بنانا چاہتا تھا ۔انہوں نے کہا کہ یہ الیکشن تاریخی الیکشن تھا،اس میں لوگوں نے قربانیاں دیں ،انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے لوگوں کو داد دیتا ہوں کہ وہ دہشت گردی کے باوجود ووٹ دینے کےلئے باہرنکلے۔ انہوں نے کہا کہ وہاں اکرام اللہ گنڈا پور اورہارون بلورخودکش دھماکوں میں شہید ہوئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ شدید گرمی میں کے باوجود الیکشن کے عمل میں حصہ لینے نکلنے والوں کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی امیدواروں سمیت سیکیورٹی اہلکاروں نے بھی الیکشن کے عمل کے لیے اپنی جانیں دیں جس پر انہیں خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ میں جس شخصیت سے متاثر ہوں وہ نبی کریم ہیں ،انہوں نے انسانیت کا ایسا نظام رائج کیا جس کی مثال دنیا میں نہیں ملتی۔انہوں نے کہا کہ میں پاکستان کو ایسی فلاحی ریاست چاہتا ہوں جس طرح ہمارے نبی نے بنائی تھی ۔لیکن ہماری ریاست میں یہ نظام الٹا ہے جہاں آدھی سے زیادہ آبادی غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزار ہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہاں جس کی لاٹھی اس کی بھینس والا نظام ہے ۔ انہوں نے کہاکہ یہاں غریب کسان محنت کرتا ہے لیکن اس کو پیسہ نہیں ملتا تاکہ وہ اپنے بچوںکو خوراک دے سکے ۔ انہوں نے کہا کہ یہاں 45 فیصد بچے بیماریوں کے باعث آگے ہی نہیں بڑھ پاتے۔انہوں نے کہاکہ ہمارے ملک میں ڈھائی کروڑ پاکستانی بچہ سکولوں سے باہر ہے، اتنی تو کئی ممالک کی آبادی بھی نہیں۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں سب سے زیادہ ہماری خواتین زچہ و بچہ کے مرحلے میں مر جاتی ہیں ،پینے کا صاف پانی نہ ملنے کے باعث دنیا میں سب سے زیادہ پاکستانی بچے مر جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اقتدار میں آکر منشور پر عمل کرنے کا وقت آگیاہے۔انہوں نے کہاکہ ملک میں ساری پالیسیاں کمزور طبقے اور غریب کسانوں کےلئے بنائینگے ۔انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہو گی کہ سب سے زیادہ پیسہ انساتی ترقی پر خرچ ہو کیونکہ کوئی بھی ملک ترقی نہیں کر سکتا جہاں ایک چھوٹا سا جزیزہ امیروں کا ہو اور غریبوں کا سمندر ہو۔انہوں نے کہا کہ مدینہ کی ریاست پہلی فلاحی ریاست تھی جہاں انہوں نے اصول طے کئے تھے، جہاں قانون کی نظر میں سب برابر تھے، میرٹ کی بالادستی تھی، عدل وانصاف تھا۔ انہوں نے کہا کہ ہم بھی ان ہی اصولوں پر چلنے کی کوشش کرینگے۔

انہوں نے کہا کہ تین سال مجھ پر بہت زیادہ ذاتی حملے کئے گئے، لیکن میں سب کچھ بھول چکا ہوں، میرا مقصد میری ذات سے بڑا ہے ۔انہوں نے کہا کہ یہ پہلی حکومت ہوگی جو کسی سیاسی مخالف کے خلاف انتقامی کارروائی نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم قانون کی بالادستی قائم کرینگے، ہم کسی کوسیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنائیں گے۔ عمران خان نے کہا کہ جو ملکی قانون کے خلاف جائے گااسکے خلاف ایکشن لیں گے ۔ یہاں قانون سب کیلئے برابر ہوگا۔ اگر ہمارا کوئی غلط کریگا تو اسے بھی قانون پکڑے گا اس کیخلاف بھی ایکشن لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایسے مضبوط ادارے بنائینگے جو کرپشن روکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ احتساب مجھ سے شروع ہوگا اس کے بعد میرے وزرا کا احتساب ہوگا، صرف اپوزیشن کا احتساب نہیں ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ مثال قائم کرینگے کہ قانون سب کیلئے ایک جیسا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ مغرب اس وجہ سے آگے ہے کہ ان کا قانون کسی کے ساتھ امتیاز نہیں کرتا، وہاں بالادستی قائم ہے، انصاف کا نظام موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم انشاءاللہ اس ملک میں وہ ادارے قائم کرینگے جو ملک کا گورننس سسٹم ٹھیک کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا حکومتی نظام ٹھیک نہ ہونے سے یہاں سرمایہ کاری نہیں آتی ۔ انہوں نے کہا کہ اداروں کے غیر فعال ہونے سے ہماری اکانومی نیچے جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا سب سے بڑا اثاثہ اوورسیز پاکستانی ہیں ، ملک میں گورننس ٹھیک نہ ہونے اور کرپشن کی وجہ سے وہ یہاں سرمایہ کاری نہیں کرتے،یہاں وہ اپنا پیسہ لگانے کی بجائے باہر چلے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم گورننس کا نظام ٹھیک کر کے بیرون ملک مقیم پاکستانیوں اور انویسٹرز کو ملک میں واپس لے کر آئینگے ،انہیں سرمایہ کاری کرنے کا موقع فراہم کرینگے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close