اہم خبریںپاکستان

اگر سی پیک کو ختم یا تعطل میں ڈالا گیا تو ملکی معیشت کےلئے اچھا نہیں ہوگا:مولانا فضل الرحمن

اسلام آباد :متحدہ مجلس عمل اور جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ اگر سی پیک کو ختم یا تعطل میں ڈالا گیا تو ملکی معیشت کےلئے اچھا نہیں ہوگا ،تمام پارٹیوں اور دینی جماعتوں سے رابطہ کرکے کل جماعتی کانفرنس بلائیں گے، ریاست مدینہ کے نام پر قوم کو دھوکا نہ دیا جائے۔ پیر کو ایم ایم اے کا اجلاس متحدہ مجلس عمل کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کی سربراہی میں ہوا جس میں موجودہ سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ ایم ایم اے کی جنرل کونسل میں ملکی سیاسی حالات کا جائزہ لیا انہوںنے کہاکہ موجودہ حکومت نے آغاز سے ہی ملک کو بحرانوں میں دھکیل دیا ہے ۔
انہوںنے کہاکہ ملک کے طول و عرض کے ساتھ دنیا بھر میں قادیانی نیٹ ورک متحرک ہوگئی ہیں ،یہ قوتیں بین الاقوامی ایجنڈا کے بغیر متحرک نہیں ہوسکتیں انہوںنے کہاکہ ایم ایم اے تمام جماعتوں سے مشاورت کرکے اے پی سی بلائے گی تاکہ مشترکہ لائحہ عمل طے کیا جائے ۔ انہوںنے کہاکہ اقتصادی مشاورتی کونسل کی تشکیل میں عاطف میاں کی شرکت پوری حکومتی ذہنی و فکری سوچ کا تعین کرتا ہے میاں عاطف کے بعد دو اور لوگوں نے استعفیٰ دیا جس سے ثابت ہوتا ہے کہ پاکستان کو مغربی معیشت کا تابع بنایا جائے انہوںنے کہاکہ قائد اعظم نے سٹیٹ بینک کی افتتاحی تقریب میں کہاتھا کہ ہماری معیشت کی بنیاد اسلامی تعلیمات پر ہوگی ۔
مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ مغربی فلسفہ معیشت نے صرف تباہی اور جنگیں ہی دی ہے،ریاست مدینہ کے نام پر قوم کو دھوکہ نہدیا جائے، یہ منہ اور ریاست مدینہ؟ انہوںنے کہا کہ عندیہ دیا جارہا ہے کہ سی پیک منصوبہ پر نظر ثانی کی جائے گی پاک چین 70 سالہ دوستی پہلی بار اقتصادی دوستی میں تبدیل ہوئی اگر یہ منصوبہ ختم یا تعطل کا شکار کیاگیا تو یہ ملک پر ضرب کاری ہوگا انہوںنے کہا کہ ہمیں غلامی کے نئے دور کی جانب لے جایا جارہا ہے جس کی بھرپور سطح پر مزاحمت کی جائے گی ۔ مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ قوم کو جو سبز دکھائے گئے تھے اس تبدیلی حکومت نے مہنگائی کے پہاڑ توڑے جارہے ہیں ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close