اہم خبریں

امریکہ بھارت اسٹریٹجک الائنس ہمارے کہنے سے تبدیل نہیں ہو سکتا:شاہ محمود قریشی

کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی رپورٹ نے تجسس اور نئی بحث کو جنم دیا ،بھارت کچھ نہیں چھپا رہا تو انکوائری کمیشن بنانے کےلئے حمایت کرے ،وزیر خارجہ کا انٹرویو

نیویارک:وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ امریکہ بھارت اسٹریٹجک الائنس ہمارے کہنے سے تبدیل نہیں ہو سکتا تاہم ہمیں اپنے مفادات کا خیال رکھتے ہوئے آگے بڑھنا ہے اور امریکا کو یہ باور کرانا ہے کہ وہ جب بھی پاکستان سے مل کر آگے بڑھا اسے فائدہ ہوا،حکومتوں کی ترجیحات بدلتی رہتی ہیں، ہمیں مشکل حالات سے نمٹنا ہے ہم یہاں کچھ کھونے نہیں پانے آئے ہیں،افغانستان، چین اور پاکستان مل بیٹھ کر معاملات کے حل کی کوشش کریں گے ،امریکی ہم منصب مائیک پومپیو سے ملاقات میں پاکستان کے اقدامات سے آگاہ کریں گے ،کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی رپورٹ نے تجسس اور نئی بحث کو جنم دیا،بھارت کچھ نہیں چھپا رہا تو انکوائری کمیشن بنانے کےلئے حمایت کرے۔
ایک انٹرویو میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ وہ پاک امریکہ تعلقات میں سردمہری کے خاتمے کےلئے پرعزم ہیں۔انہوںنے کہاکہ پچھلے دنوں امریکا کی جانب سے سخت بیانات سامنے آئے لیکن ہم کوشش کریں گے کہ امریکا کو زمینی حقائق اور اپنے تعاون سے متعلق آگاہ کریں۔امریکا اور بھارت کے بڑھتے ہوئے تعلقات پر تبصرہ کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ امریکہ بھارت اسٹریٹجک الائنس پر ہمارے کہنے سے نظرثانی نہیں ہوسکتی۔انہوںنے کہا کہ حکومتوں کی ترجیحات بدلتی رہتی ہیں، ہمیں مشکل حالات سے نمٹنا ہے اور ہمیں اپنے مفادات کا خیال رکھتے ہوئے آگے بڑھنا ہے۔
انہوں نے کہا کہ امریکاجب بھی پاکستان سے مل کر آگے بڑھا، ان کو فائدہ ہوا، نقصان نہیں۔اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی اجلاس میں شرکت کے حوالے سے شاہ محمود قریشی نے کہاکہ ہم یہاں کچھ کھونے نہیں بلکہ پانے آئے ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ جنرل اسمبلی اجلاس میں پاکستان کا موقف پیش کرنے کا موقع ملتا ہے، یہاں ایک ہی نشست میں کئی اہم رہنماوں سے ملاقات ہوجاتی ہے۔شاہ محمود قریشی نے بتایا کہ مختلف ممالک سے کثیرجہتی اور دوطرفہ ملاقاتیں بھی ہوئیں اور جن ممالک کے ساتھ رابطے ٹوٹے ہوئے تھے، ان کو بحال کرنےکا موقع ملا۔وزیر خارجہ نے بتایا کہ ان کی افغان حکام سے ملاقات ہوئی جن کے ساتھ معاملات حل کرنے کی ضرورت ہے، چین کے وزیرخارجہ سے ملاقات میں دسمبر میں ملاقات طے ہوئی ہے جبکہ سعودی وزیر خارجہ سے بھی ملاقات طے ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close